این اے 53: عمران خان ایپلٹ ٹریبونل میں پیش، نامزدگی فارم مکمل کرلیا 155

خلائی مخلوق کا پتا چلانا ہے تو اصغر خان کیس کھول دیں: عمران خان

خلائی مخلوق کا پتا چلانا ہے تو اصغر خان کیس کھول دیں: عمران خان

اسلام آباد: چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کا کہنا ہے کہ خلائی مخلوق کا پتا چلانا ہے تو اصغر خان کیس کھول دیں سب پتا چل جائے گا کہ لاڈلہ کون تھا اور کیسے پیسے بانٹے گئے۔

جنوبی پنجاب صوبہ محاذ کے پی ٹی آئی میں انضمام کے موقع پر میڈیا سے گفتگو میں عمران خان نےکہا کہ پہلی مرتبہ خیبرپختونخوا میں تحریک انصاف اقتدار میں آئی، وہاں لوگوں کو گیس اور پانی کا پورا حصہ نہیں ملتا، باہر سے جو سرمایہ کاری آتی ہے تو وفاق اسے ہونے نہیں دیتا، اس عمل سے احساس محرومی پیدا ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں احساس محرومی بڑھتی جارہی ہے، لاہورمیرا شہر ہے جہاں پنجاب کا 53 یا 55 فیصد ترقیاتی بجٹ لگتا ہے، مجھے خوش ہونا چاہیے لیکن اس سے لاہور کے قریبی شہر شیخوپورہ، قصور اور دیگر ترقی سے رہ جاتے ہیں، یہی احساس محرومی جنوبی پنجاب میں ہے۔

چیئرمین تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ صوبہ بنانا آسان نہیں لیکن ہم ابھی کمیٹی بنادیں گے اور اس کی پوری تیاری کریں گے، فاٹا کا انضمام بھی بہت ضروری ہے اور وہ آسان نہیں لیکن اس کے لیے ہم کوشش کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ بلدیاتی نظام لانا بھی ضروری ہے، جب تک بلدیاتی نظام نہیں آئے گا نچلی سطح پر لوگوں کے مسئلے حل نہیں ہوں گے۔

خلائی مخلوق سے متعلق سوال پر عمران خان کا کہنا تھاکہ خلائی مخلوق کا پتا چلانا ہے تو اصغر خان کیس کھول دیں، پتا چل جائےگا کہ کیسے پیسے بانٹے گئے، نوازشریف کو اس وقت 35 لاکھ ملے، شہبازشریف کو پیسے ملے اور جاوید ہاشمی کو بھی براہ راست پیسے ملے، اصغر خان کیس سے پتا چل جائے گا کہ لاڈلہ کون تھا لہٰذا نوازشریف اپنے تجربے سے خلائی مخلوق کی بات کرتے ہیں۔

چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ فاٹا کا نظام دہشت گردی کی وجہ سے تباہ ہوگیا، اب ان کے پاس کوئی نظام نہیں، فاٹا کے لوگ خیبرپختونخوا کا حصہ نہں بننا چاہتے تھے، ان پر جو ظلم ہوئے ان کو کوئی پوچھنے والا نہیں، صوبائی اسمبلی میں ان کی کوئی نمائندگی نہیں، فاٹا والے پاکستان میں یتیم بن گئے، فاٹا کے نوجوانوں کا مطالبہ ہے کہ ان کی بھی آواز ہو۔

عمران خان کہنا تھاکہ اس وقت کسی جماعت سے اتحاد کا ارادہ نہیں، صرف مولانا سمیع الحق سے خیبرپختونخوا میں اتحاد ہوگا، الیکشن وقت پر ہوں گے اور ہونے بھی چاہئیں، ہماری پوری تیاری ہی ٹائم کے لیے ہے، ہم 25 جولائی کے لیے مکمل تیار ہیں۔

انہوں نےکہا کہ الیکشن کے لیے ٹکٹ میرٹ پر دیں گے اور ٹکٹ دینے کا حتمی فیصلہ میں خود کروں گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں