صحافی ذیشان بٹ قتل: سپریم کورٹ کا مرکزی ملزم کو 15 روز میں گرفتار کرنے کا حکم 164

صحافی ذیشان بٹ قتل: سپریم کورٹ کا مرکزی ملزم کو 15 روز میں گرفتار کرنے کا حکم

صحافی ذیشان بٹ قتل: سپریم کورٹ کا مرکزی ملزم کو 15 روز میں گرفتار کرنے کا حکم

لاہور: چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے انسپکٹر جنرل (آئی جی) پنجاب کیپٹن (ر) عارف نواز کو گذشتہ ماہ سمبڑیال میں صحافی ذیشان بٹ کو قتل کرنے والے مرکزی ملزم کو 15 روز میں گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 2 رکنی بینچ نے سمبڑیال میں صحافی ذیشان بٹ کے قتل سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت کی۔

سماعت کے دوران آئی جی پنجاب پیش ہوئے اور عدالت کو بتایا کہ اب تک مرکزی ملزم گرفتار نہیں کرسکے۔عدالت عظمیٰ نے آئی جی پنجاب کو 15 روز میں مرکزی ملزم کو گرفتار کرنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس نے آئی جی پنجاب کو مخاطب کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ آپ جانتے ہیں معاملہ کتنا اہم ہے،خود احساس کریں۔

واضح رہے کہ مذکورہ کیس کی 14 اپریل کو ہونے والی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے آئی جی پنجاب کو ذیشان بٹ کے قتل کے مرکزی ملزم کو 10 روز میں گرفتار کرنے کا حکم دیا تھا۔

صحافی ذیشان بٹ کا قتل

یاد رہے کہ صحافی ذیشان بٹ کو 27 مارچ کی دوپہر کو سمبڑیال میں اُس وقت قتل کردیا گیا تھا،

سیالکوٹ میں صحافی ذیشان بٹ کا قتل، آڈیو ریکارڈنگ سامنے آنے کے باوجود ملزم آزاد

جب وہ دکانداروں پر عائد کیے جانے والے ٹیکس کے حوالے سے معلومات لینے یونین کونسل بیگوالا کے دفتر پہنچے تھے.اس موقع پر ذیشان بٹ پر تین گولیاں فائر کی گئی تھیں جس کے بعد مرکزی ملزم یوسی چیئرمین عمران چیمہ موقع سے فرار ہوگیا تھا، ساتھ ہی ملزم کے اہلخانہ بھی علاقہ چھوڑ کر جاچکے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق صحافی ذیشان بٹ اور یوسی چیئرمین عمران چیمہ کے درمیان ماضی میں بھی سیاسی طور پر رنجشیں رہی ہیں۔ان دونوں نے بلدیاتی انتخابات میں بھی ایک دوسرے کے خلاف الیکشن لڑا تھا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں