64

صحت عامہ کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے اداروں کا تمباکو کی مصنوعات پر مزید 26 فیصد ٹیکسں کے نفاذ کا مطالبہ

صحت عامہ کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے اداروں کا تمباکو کی مصنوعات پر مزید 26 فیصد ٹیکسں کے نفاذ کا مطالبہ

اسلام آباد(بیورو رپورٹ)صحت عامہ کے تحفظ کے لیے کام کرنے والے اداروں کا تمباکو کی مصنوعات پر مزید 26 فیصد ٹیکسں کے نفاذ کا مطالبہ، تمباکو پر ٹیکس میں اضافے کو موثر طریقے سے نافذ کیا جائے، تنظیم برائے تحفظ حقوق اطفال (سپارک) کے زیر اہتمام ایک مقامی ہوٹل میں صحافیوں کے ساتھ ایک بریفنگ سیشن کا اہتمام کیا گیا جس میں سپارک اور دیگر تنظیموں نے وزیر خزانہ پاکستان کو لکھے گئے

خط کے بارے میں میڈیا کو بتایا کہ آنے والے فیڈرل بجٹ میں تمباکو ٹیکس کو کم از کم 26 فیصد بڑھایا جائے۔ پاکستان کو عمومی طور پر تمباکو کی استعمال میں ایک بڑا چیلنج کا سامنا ہے، جس میں 31.9 ملین بالغ افراد شامل ہیں جو 15 سال سے زیادہ عمر کے ہیں اور جنہیں تمباکو کے صارفین کی شناخت دی گئی ہے، جو ان کی عمر کی 19.7 فیصد ہے۔ سگریٹ سے متعلق بیماریاں سالانہ 160,000 سے زیادہ جانیں لیتی ہیں، جو ملکی جی ڈی پی کا 1.6 فیصد ہیں۔ البتہ، مالی سال 23-2022 میں سگریٹ ٹیکس صرف ان اخراجات کا 16 فیصد کا حصہ تھا، جو 2019 میں 19.5 فیصد سے کم ہے۔
ڈاکٹر خلیل احمد، پروگرام منیجر سپارک نے کہا کہ سگریٹ کی قیمت کم ہونے کی وجہ سے یہ زیادہ لوگوں کو متاثر کرتا ہے کہ وہ سگریٹ پینا شروع کریں یا صحت کے معروف خطرات کے باوجود عادت کو جاری رکھیں۔انہوں نے مطالبہ کیاکہ سگریٹ پر ٹیکس میں اضافے کو موثر طریقے سے نافذ کیا جائے تاکہ اسکے استعمال کو روکا جاسکے۔ علاوہ ازیں ٹیکس کے علاوہ عوامی تعلیمی کیمپینز، دھواں سے پاک پالیسیوں اور سگریٹ چھوڑنے کے پروگراموں کی حمایت شامل ہونی چاہئے۔ ملک عمران احمد، کنٹری ہیڈ کیمپین فار ٹبیکو-فری کڈز (سی ٹی ایف کے ) نے کہا، کہ سیاست دان صحت کی دولتیں میں مشورہ دیتے ہیں

کہ بین الاقوامی صحت کی تنظیمات جیسے کہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن اور ورلڈ بینک کی تجویز کے مطابق، تمباکو ٹیکس میں اضافہ ایک موثر اقدام ہوسکتا ہے تاکہ استعمال کم ہو اور ہیلتھ کیلئے ریونیو جنریٹ ہو۔ 2024-25 کے مالی سال کے لئے 26.6 فیصد کی ایف آئی ڈی میں اضافہ، جیسا کہ پیش کیا گیا ہے، ایک اہم قدم معلوم ہوتا ہے۔ نہ صرف یہ بہترین طریقے سے ہیلتھ کی مصروفیات کا بڑا حصہ وصول کرنے میں مدد فراہم کرسکتا ہے، بلکہ اس کے علاوہ لاکھوں افراد کو سگریٹ پینے سے روکا جا سکتا ہے۔

علاوہ ازیں، پروجیکٹڈ ریونیو میں اضافہ مختلف عوامی صحت کے منصوبوں کی سرمایہ کاری اور قومی معیشت کو مضبوط کرنے کے لئے قیمتی ہو سکتا ہے۔پاکستان میں تمباکو کی استعمال کی حد اور اس کے ساتھ منسلک صحتی اور معاشی بوجہ بڑھتی قیمت کے لئے پریشان کن ہے۔ سپارک کی طرح تنظیمیں جیسے ہیومن ڈویلپمنٹ فاؤنڈیشن، عورت فاؤنڈیشن اور کرومیٹک ٹرسٹ کے ساتھ منسلک اہم عوامی صحتی مسائل پر ان کی پریشانیوں کو اجاگر کرتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں